افغان طالبان کی پاکستان ميں سعودی ولی عہد سے ملاقات کا امکان

سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان اپنے دورہ پاکستان کے دوران افغان طالبان کے نمائندوں سے ملاقات کر سکتے ہیں۔ پاکستانی حکومتی ذرائع کے مطابق اس ملاقات کا مقصد افغانستان میں قیام امن کی کوششوں کو تقویت دینا ہے۔

پاکستان افغانستان میں امن مذاکرات میں نہایت سرگرم کردار ادا کر رہا ہے، جس میں رفتہ رفتہ تیزی بھی آ رہی ہے۔ امریکا چاہتا ہے کہ افغانستان سے وہ اپنی تمام فوج نکال لے۔

سعودی ولی عہد کی پاکستان آمد ميں تاخير، وجہ کيا ہو سکتی ہے؟

سعودی شہزادے کی آمد: تیاریوں کے اخراجات زیرِ بحث آئیں گے؟

دیگر خلیجی ریاستوں کی طرح سعودی عرب بھی اس امن عمل کا حصہ ہے اور سمجھا جاتا ہے کہ تاریخی طور پر سعودی عرب اور طالبان کے درمیان تعلقات اس سلسلے میں کسی حد تک کردار ادا کر سکتے ہیں۔

دو اعلیٰ حکومتی عہدیداروں نے بتایا کہ سعودی ولی عہد ممکنہ طور پر اسلام آباد میں طالبان کے وفد سے ملاقات کر سکتے ہیں۔ اس کے علاوہ طالبان کے وفود امریکی وفد کے علاوہ پاکستانی وزیراعظم عمران خان سے بھی ملاقات کر سکتے ہیں۔

خبر رساں ادارے روئٹرز نے ایک سینئر پاکستانی حکومتی عہدیدار کا نام ظاہر کیے بغیر بتایا ہے، ’’اس وقت اس ملاقات کو انتہائی خفیہ رکھا گیا ہے، تاہم مضبوط اشارے مل رہے ہیں کہ افغان طالبان 18 فروری کو سعودی ولی عہد سے ملاقات کر سکتے ہیں۔‘‘

دوسری جانب قطر میں طالبان کے ایک سینئر رہنما نے تاہم کہا ہے کہ اس سلسلے میں فی الحال کوئی حتمی فیصلہ نہیں کیا گیا ہے۔ ’’سعودی ولی عہد سے ملاقات کا کوئی منصوبہ نہیں ہے مگر جب وہ اسلام آباد میں ہوں گے، تو اس بارے ميں سوچا جا سکتا ہے۔‘‘

شہزادہ محمد بن سلمان اور سعودی سفارتی تنازعے

کینیڈا کے ساتھ تنازعہ

شہزادہ محمد بن سلمان کے دور میں تازہ ترین سفارتی تنازعہ کینیڈا کے ساتھ جاری ہے۔ اس سفارتی تنازعے کی وجہ کینیڈا کی جانب سے سعودی عرب میں انسانی حقوق کے کارکنوں کی رہائی کے لیے کی گئی ایک ٹویٹ بنی۔ سعودی عرب نے اس بیان کو ملکی داخلی معاملات میں مداخلت قرار دیتے ہوئے کینیڈا کے ساتھ سفارتی اور اقتصادی روابط ختم کر دیے۔

شہزادہ محمد بن سلمان اور سعودی سفارتی تنازعے

برلن سے سعودی سفیر کی واپسی

نومبر سن 2017 میں سعودی عرب نے اس وقت کے جرمن وزیر خارجہ زیگمار گابریئل کی جانب سے یمن اور لبنان میں سعودی پالیسیوں پر کی گئی تنقید کے جواب میں برلن سے اپنا سفیر واپس بلا لیا۔ جرمن حکومت سعودی سفیر کی دوبارہ تعیناتی کی خواہش کا اظہار بھی کر چکی ہے تاہم سعودی عرب نے ابھی تک ایسا نہیں کیا۔

شہزادہ محمد بن سلمان اور سعودی سفارتی تنازعے

قطر کے ساتھ تنازعہ

گزشتہ برس قطری تنازعے کا آغاز اس وقت ہوا جب سعودی اور اماراتی چینلوں نے قطر پر دہشت گردوں کی معاونت کرنے کے الزامات عائد کرنا شروع کیے تھے۔ ریاض حکومت اور اس کے عرب اتحادیوں نے دوحہ پر اخوان المسلمون کی حمایت کا الزام عائد کیا۔ ان ممالک نے قطر کے ساتھ سفارتی تعلقات منقطع کرنے کے علاوہ اس کی ناکہ بندی بھی کر دی تھی۔ یہ تنازعہ اب تک جاری ہے۔

شہزادہ محمد بن سلمان اور سعودی سفارتی تنازعے

لبنان کے ساتھ بھی تنازعہ

سعودی عرب اور لبنان کے مابین سفارتی تنازعہ اس وقت شروع ہوا جب لبنانی وزیر اعظم سعد الحریری نے دورہ ریاض کے دوران اچانک استعفیٰ دینے کا اعلان کر دیا۔ سعودی عرب نے مبینہ طور پر الحریری کو حراست میں بھی لے لیا تھا۔ فرانس اور عالمی برادری کی مداخلت کے بعد سعد الحریری وطن واپس چلے گئے اور بعد ازاں مستعفی ہونے کا فیصلہ بھی واپس لے لیا۔

شہزادہ محمد بن سلمان اور سعودی سفارتی تنازعے

تہران اور ریاض، اختلافات سفارتی تنازعے سے بھی بڑے

سعودی حکومت کی جانب سے سعودی شیعہ رہنما نمر باقر النمر کو سزائے موت دیے جانے کے بعد تہران میں مظاہرین سعودی سفارت خانے پر حملہ آور ہوئے۔ تہران حکومت نے سفارت خانے پر حملہ کرنے اور کچھ حصوں میں آگ لگانے والے پچاس سے زائد افراد کو گرفتار بھی کر لیا۔ تاہم سعودی عرب نے ایران کے ساتھ سفارتی تعلقات منقطع کر دیے۔

شہزادہ محمد بن سلمان اور سعودی سفارتی تنازعے

’مسلم دنیا کی قیادت‘، ترکی کے ساتھ تنازعہ

سعودی عرب اور ترکی کے تعلقات ہمیشہ مضبوط رہے ہیں اور دونوں ممالک اقتصادی اور عسکری سطح پر ایک دوسرے کے ساتھ تعاون کرتے رہے ہیں۔ تاہم شہزادہ محمد بن سلمان کے اس بیان نے کہ ریاض کا مقابلہ ’ایران، ترکی اور دہشت گرد گروہوں‘ سے ہے، دونوں ممالک کے تعلقات کو شدید متاثر کیا ہے۔ محمد بن سلمان کے مطابق ایران اپنا انقلاب جب کہ ترکی اپنا طرز حکومت خطے کے دیگر ممالک پر مسلط کرنے کی کوشش میں ہے۔

شہزادہ محمد بن سلمان اور سعودی سفارتی تنازعے

مصر کے ساتھ تنازعے کے بعد تیل کی فراہمی روک دی

شہزادہ محمد بن سلمان کے ولی عہد مقرر ہونے سے قبل اکتوبر سن 2016 میں مصر اور سعودی عرب کے تعلقات اقوام متحدہ میں ایک روسی قرار داد کی وجہ سے کشیدہ ہو گئے تھے۔ بعد ازاں مصر نے بحیرہ احمر میں اپنے دو جزائر سعودی عرب کے حوالے کر دیے تھے جس کی وجہ سے مصر میں مظاہرے شروع ہو گئے۔ سعودی عرب نے ان مظاہروں کے ردِ عمل میں مصر کو تیل کی مصنوعات کی فراہمی روک دی۔

شہزادہ محمد بن سلمان اور سعودی سفارتی تنازعے

سعودی عرب اور ’قرون وسطیٰ کے دور کے ہتھکنڈے‘

مارچ سن 2015 میں سویڈن کی وزیر داخلہ نے سعودی عرب میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر تنقید کرتے ہوئے ریاض حکومت کی پالیسیوں کو ’قرون وسطیٰ کے دور کے ہتھکنڈے‘ قرار دیا تھا جس کے بعد سعودی عرب نے سٹاک ہوم سے اپنا سفیر واپس بلا لیا تھا۔

اس سلسلے میں روئٹرز کی جانب سے پاکستانی دفتر خارجہ سے معلومات طلب کی گئیں، تاہم دفتر خارجہ نے اس سلسلے میں کوئی بھی تبصرہ نہیں کیا۔

واضح رہے کہ سعودی ولی عہد شہزادہ سلمان کو ہفتے کی شام اپنے دو روزہ دورے پر پاکستان پہنچنا تھا، تاہم ان کا دورہ ایک روز کے لیے تاخیر کا شکار ہو گیا ہے۔ تاہم پاکستانی وزارت خارجہ کا کہنا ہے کہ تاخیر کے باوجود ان کے دورے کے پروگرامز میں کوئی تبدیلی نہیں آئی ہے۔ اس دورے میں وہ پاکستانی حکام کے ساتھ توانائی کے شعبے میں دس ارب ڈالر کی سرمایہ کاری کا اعلان کر سکتے ہیں۔

ع ت، ع س (روئٹرز)

موضوعات

ہمیں فالو کیجیے