روس پر سرمائی اولمپکس میں شرکت پر پابندی

بین الاقوامی اولمپک کمیٹی کے فیصلے کے مطابق روس اگلے برس ہونے والے سرمائی اولمپکس میں شرکت نہیں کر سکے گا۔کھلیوں کی دنیا کے اس اہم ترین ملک میں اس اعلان پر شدید غصہ اور حیرانی پائی جاتی ہے۔

بین الاقوامی  اولمپک کمیٹی ( آئی او سی) کے مطابق 2014ء کے سوچی ونٹر اولمپکس میں روس کی جانب سے منظم انداز میں ممنوعہ ادویات کا استعمال کیا گیا تھا، جس کی وجہ سے یہ فیصلہ کیا گیا ہے۔ روسی سینٹیر فرانز کلنزیوچ نے آئی او سی کے اس فیصلے پر اپنے رد عمل کا یوں اظہار کیا، ’’اس طرح کھیلوں کی دنیا میں پائے جانے والے اتحاد اور بین الاقوامی سلامتی کو خطرات کا سامنا ہو سکتا ہے۔‘‘

IOC Olympia Russland Doping

ڈوپنگ نہ کرنے والے تمام کھلاڑیوں کو شرکت کی اجازت دی ہے، باخ

آئی او سی نے مزید بتایا کہ صرف چند روسی کھلاڑیوں کو ایک غیر جانبدار پرچم تلے پائیونگ چینگ میں ہونے والے اولمپک مقابلوں میں شامل ہونے کی اجازت دی گئی ہے۔

کھیلوں کی متعدد روسی تنظیموں نے اس فیصلے کے بعد آئی او سی کے سربراہ تھوماس باخ کے استعفی کا مطالبہ کیا ہے، ’’یہ فیصلہ کھلاڑیوں اور ٹرینرز کی ایک نسل کی قسمت پر اثر انداز ہو سکتا ہے‘‘۔ اس تناظر میں باخ کا کہنا تھا، ’’اولمپک کے بائیکاٹ سے کبھی کچھ حاصل نہیں کیا جا سکا ہے اور میرے خیال میں بائیکاٹ کی وجہ بھی دکھائی نہیں دیتی کیونکہ ہم نے ڈوپنگ نہ کرنے والے تمام کھلاڑیوں کو شرکت کی اجازت دی ہے۔‘‘

جرمنی میں ڈوپنگ کے خلاف عوامی بیداری کی مہم

روسی تاریخ کا بدترین ڈوپنگ اسکینڈل، لیکن مقدمہ ایک بھی نہیں

روس کی جانب سے ڈوپنگ کا اسکینڈل اس مرتبہ صرف کھلاڑیوں پر نہیں بلکہ اس شعبے سے منسلک حکام اور سیاسی قیادت پر بھی اثر انداز ہوا ہے۔ روس کی اولمپک کمیٹی (آر او سی) بھی جنوبی کوریا نہیں جا سکے گی جبکہ اس کے صدر سربراہ الیگزینڈر سوچکوف کی آئی او سی کی  رکنیت بھی ختم کر دی گئی ہے۔

جنوبی کوریا میں اگلے برس نو تا پچیس فروری تک ہونے والے ان سرمائی اولمپکس میں روسی وزارت کھیل کا کوئی نمائندہ بھی شرکت نہیں کر سکے گا۔ اسی طرح روسی فٹ بال فیڈریشن کے سربراہ ویتالی مٹکو بھی ڈوپنگ کے الزامات کی وجہ سے زندگی بھر کسی اولمپک کھیلوں میں شرکت نہیں کر سکیں گے۔


الپائن سکینگ

اس سرمائی کھیل میں پانچ ایسے مختلف مقابلے کروائے جاتے ہیں، جن میں کھلاڑی کی رفتار دیکھی جاتی ہے۔ جرمن کھلاڑی ماریہ ہوفل رِیش اور فیلیکس نوئے روتھر ان مقابلوں کو جیتنے کے لیے پرعزم ہیں۔ ماریہ ہوفل رِیش ماضی میں دو مرتبہ طلائی تمغہ جیت چکی ہیں۔

فری اسٹائل اِسکی

اس مرتبہ نئے اور دلچسپ فری اسٹائل اِسکی مقابلے بھی متعارف کروائے جا رہے ہیں۔ تیزی سے آکر جمپ لگانے والی روایتی اِسکی تو 1992 سے ونٹر اولمپکس کا حصہ ہے لیکن سوچی میں مرد و خواتین کے لیے اس کے دواور مقابلے ہاف پائپ اور سلوپ اسٹائل متعارف کروائے جا رہے ہیں۔

سنو بورڈ

سن 1998ء سے سنوبورڈ ونٹر اولمپکس کا حصہ ہے۔ اس مرتبہ پہلی بار اس کھیل کے مختلف مقابلوں میں 10 طلائی تمغہ دیے جائیں گے. نئے سلوپ اور ہاف پائپ اسٹائل میں کودنے کے دوران کھلاڑی ہوا میں مختلف کرتب بھی دکھاتے ہیں۔

نشانہ بازی (بائیتھلون)

یہ کھیل طویل برفیلہ راستہ طے کرنے اور نشانہ بازی کا مجموعہ ہے۔ جرمنی میں یہ سب سے مقبول سرمائی کھیل ہے۔ اس کھیل کے مختلف مقابلوں میں مرد و خواتین علیحدہ علیحدہ یا بطور ٹیم شرکت کرتے ہیں۔ جرمنی نے سب سے زیادہ طلائی تمغے اسی سرمائی گیم میں حاصل کر رکھے ہیں۔

کراس کنٹری اِسکی

کھلاڑیوں کو سب سے طویل راستہ اسی گیم میں طے کرنا پڑتا ہے۔ اس میں مجموعی طور پر مختلف بارہ مقابلے کروائے جاتے ہیں۔ اس کھیل میں اکثر ہار اور جیت کے درمیان ایک آدھ سینٹی میٹر کا ​​ہی فرق ہوتا ہے، جیسا کی تصویر میں دیکھا جا سکتا ہے۔

اِسکی جمپنگ

اس کھیل میں پہاڑی کی چوٹی سے نیچے کی طرف پھیسلا جاتا ہے اور پھر چھلانگ لگا دی جاتی ہے۔ عام طور پر کھلاڑیوں کی چھلانگ کی لمبائی نوّے میٹر سے 120 میٹر کے درمیان ہوتی ہے۔ سوچی میں پہلی مرتبہ اِسکی جمپنگ اور طویل دوڑ کو ملا کر ایک نیا مقابلہ ہو رہا ہے۔

برف گاڑی ریس

برف گاڑی کے مقابلے سن 1924 سے سرمائی اولمپکس کا حصہ ہیں۔ اس کھیل میں دو طرح کے مقابلے ہوتے ہیں۔ ایک مقابلے میں ایک کھلاڑی گاڑی کو کچھ دیر دھکا لگاتا ہے اور پھر اس پر سوار ہو جاتا ہے دوسری مقابلے میں ان کی تعداد زیادہ ہوتی ہے۔ گزشتہ بارہ برسوں سے خواتین بھی اس کھیل میں حصہ لے رہی ہیں۔

تختہ گاڑی ریس

اس کھیل میں پیٹ کے بل ایک تختے پر لیٹا جاتا ہے۔ جو کھلاڑی سب سے تیز رفتار ہو گا، وہی یہ ریس جیتے گا۔ سوچی میں پہلی مرتبہ ٹیموں کے مقابلے بھی کروائے جائیں گے۔

کَرلنگ یا پتھر کُنڈلی کھیل

اس کھیل میں کھلاڑی اپنے کَرلِنگ سٹون کو دھکا دیتے ہوئے ایک مخصوص دائرے کے عین درمیان میں کھڑا کرتے ہیں۔ اگر دوسرے کھلاڑی کے کرلنگ سٹون راستے میں ہوں تو ٹھوکر لگا کر انہیں بھی راستے سے ہٹانا ہوتا ہے۔

فگر سکیٹنگ

اس کھیل میں کھلاڑیوں کو مختلف کرتب ایک ساتھ کرنا ہوتے ہیں۔ مثال کے طور پر برف پر مخصوص انداز میں موڑ کاٹتے ہوئے چھلانگ لگانا اور برف کے میدان پر رقص کرنا بھی شامل ہوتا ہے۔ ان مقابلوں میں مرد و خواتین علیحدہ علیحدہ یا پھر جوڑے کی صورت میں حصہ لے سکتے ہیں۔ سوچی میں پہلی مرتبہ ٹیم مقابلے بھی ہوں گے۔

سپیڈ اسکیٹنگ

سپیڈ اسکیٹنگ سن 1924 میں پہلی مرتبہ ہونے والے سرمائی اولپمکس کا حصہ ہے۔ اس کھیل میں چھ مختلف مقابلے کروائے جاتے ہیں، جن میں مخصوص قسم کے جوتے پہنے ہوئے کھلاڑیوں کو پانچ سو سے لے کر دس ہزار میٹر کا فاصلہ برف کی بنی ہوئی سڑک پر طے کرنا ہوتا ہے۔

آئس ہاکی

آئس ہاکی بھی سن 1924 سے سرمائی اولمپکس کا حصہ ہے۔ اس شعبے میں شمالی امریکا اور روس کی ٹیمیں طاقتور تصور کی جاتی ہیں۔ جرمنی کی ٹیم ابھی تک صرف دو مرتبہ کانسی کا تمغہ جیت پائی ہے اور سوچی کے لیے کوالیفائی ہی نہیں کر سکی۔ سن 1998ء سے خواتین بھی اس میدان میں اتر چکی ہیں۔

موضوعات