’قابض طاقتیں‘ افغانستان سے نکل جائیں، طالبان رہنما

افغان طالبان نے دہرایا ہے کہ غیر ملکی افواج کے مکمل انخلاء سے قبل افغانستان میں قیام امن ممکن نہیں ہے۔ افغان طالبان کے رہنما نے کہا ہے کہ مزید غیر ملکیوں فوجیوں کو افغانستان تعینات کرنے سے صورتحال مزید خراب ہو جائے گی۔

خبر رساں ادارے ڈی پی اے نے افغان طالبان کے رہنما ہیبت اللہ اخوندزادہ کے ایک نئے پیغام کے حوالے سے بتایا ہے کہ امریکی یا مغربی دفاعی اتحاد نیٹو کے مزید فوجیوں کو افغانستان روانہ کرنے سے اس شورش زدہ ملک میں سکیورٹی کی صورتحال مزید ابتر ہو جائے گی۔ اس جنگجو رہنما نے عید الفطر سے قبل جاری کردہ اپنے پیغام میں دہرایا ہے کہ غیر ملکی افواج کو افغانستان سے نکل جانا چاہیے۔

افغانستان میں ہزاروں امریکی فوجی تعینات کیے جانے کا امکان

افغانستان میں پچھلی غلطیاں نہیں دہرائیں گے، امریکی وزیر دفاع

امریکا اور نیٹو اپنے مزید فوجی افغانستان بھیجیں گے یا نہیں؟

افغانستان میں طالبان کی شورش میں اضافے کے نتیجے میں امریکا اور نیٹو اس ملک میں ہزاروں اضافی فوجی تعینات کرنے پر غور کر رہے ہیں تاکہ وہ مقامی سکیورٹی اہلکاروں کی تربیت کا کام کر سکیں۔ یہ امر اہم ہے کہ حالیہ کچھ عرصے میں طالبان نے اپنے حملوں میں تیزی پیدا کر دی ہے۔ کئی سکیورٹی ماہرین نے افغانستان میں تازہ پرتشدد واقعات پر شدید تحفظات کا اظہار بھی کیا ہے۔

اخوندزادہ نے اپنے پیغام میں کہا، ’’اگر آپ خیال کرتے ہیں کہ غیر ملکی فوجیوں کی تعداد بڑھانے سے ہمارا عزم ٹوٹ جائے گا تو یہ آپ کی غلطی ہے۔‘‘ اس کمانڈر نے مزید کہا، ’’امریکیوں کو یہ سمجھ جانا چاہیے کہ افغانستان میں جنگ جاری رہنے سے اور بمباری کرنے سے انہیں ہرگز کامیابی نہیں ملے گی۔۔۔۔ افغان عوام کسی کے آگے جھکنے والے نہیں ہیں۔‘‘

افغانستان کے بڑے جنگی سردار

ملا داد اللہ

انیس سو اسی کی دہائی میں سوویت فورسز کے خلاف لڑائی میں ملا داد اللہ کی ایک ٹانگ ضائع ہو گئی تھی۔ مجاہدین کے اس کمانڈر کو طالبان کی حکومت میں وزیر تعمیرات مقرر کیا گیا تھا۔ خیال کیا جاتا ہے کہ وہ ملا محمد عمر کا قریبی ساتھی تھا۔ داد اللہ سن دو ہزار سات میں امریکی اور برطانوی فورسز کی ایک کارروائی میں مارا گیا تھا۔

افغانستان کے بڑے جنگی سردار

عبدالرشید دوستم

افغانستان کے نائب صدر عبدالرشید دوستم افغان جنگ کے دوران ایک ازبک ملیشیا کے کمانڈر تھے، جنہوں نے اسی کی دہائی میں نہ صرف مجاہدین کے خلاف لڑائی میں حصہ لیا اور نوے کے عشرے میں طالبان کے خلاف لڑائی میں بھی بلکہ انہیں طالبان قیدیوں کے قتل عام کا ذمہ دار بھی قرار دیا جاتا ہے۔ سن دو ہزار تین میں انہوں نے خانہ جنگی کے دوران کی گئی اپنی کارروائیوں پر معافی بھی مانگ لی تھی۔

افغانستان کے بڑے جنگی سردار

محمد قسيم فہیم

مارشل فہیم کے نام سے مشہور اس جنگی سردار نے احمد شاہ مسعود کے نائب کے طور پر بھی خدمات سر انجام دیں۔ سن 2001 میں مسعود کی ہلاکت کے بعد انہوں نے شمالی اتحاد کی کمان سنبھال لی اور طالبان کے خلاف لڑائی جاری رکھی۔ وہ اپنے جنگجوؤں کی مدد سے کابل فتح کرنے میں کامیاب ہوئے اور بعد ازاں وزیر دفاع بھی بنائے گئے۔ وہ دو مرتبہ افغانستان کے نائب صدر بھی منتخب کیے گئے۔ ان کا انتقال سن دو ہزار چودہ میں ہوا۔

افغانستان کے بڑے جنگی سردار

گلبدین حکمت یار

افغان جنگ کے دوران مجاہدین کے اس رہنما کو امریکا، سعودی عرب اور پاکستان کی طرف سے مالی معاونت فراہم کی گئی تھی۔ تاہم اپنے حریف گروپوں کے خلاف پرتشدد کارروائیوں کے باعث حکمت یار متنازعہ ہو گئے۔ تب انہوں نے اپنی پوزیشن مستحکم کرنے کی خاطر یہ کارروائیاں سر انجام دی تھیں۔ حزب اسلامی کے رہنما گلبدین حکمت یار کو امریکا نے دہشت گرد بھی قرار دیا تھا۔ اب وہ ایک مرتبہ پھر افغان سیاست میں قدم رکھ چکے ہیں۔

افغانستان کے بڑے جنگی سردار

محمد اسماعیل خان

محمد اسماعیل خان اب افغان سیاست میں اہم مقام رکھتے ہیں۔ انہوں نے صوبے ہرات پر قبضے کی خاطر تیرہ برس تک جدوجہد کی۔ بعد ازاں وہ اس صوبے کے گورنر بھی بنے۔ تاہم سن 1995 میں جب ملا عمر نے ہرات پر حملہ کیا تو اسماعیل کو فرار ہونا پڑا۔ تب وہ شمالی اتحاد سے جا ملے۔ سیاسی پارٹی جماعت اسلامی کے اہم رکن اسماعیل خان موجودہ حکومت میں وزیر برائے پانی اور توانائی کے طور پر فرائض سر انجام دے رہے ہیں۔

افغانستان کے بڑے جنگی سردار

محمد محقق

محمد محقق نے بھی اسّی کی دہائی میں مجاہدین کے ساتھ مل کر سوویت فورسز کے خلاف لڑائی میں حصہ لیا۔ سن 1989 میں افغانستان سے غیر ملکی فوجیوں کے انخلا کے بعد انہیں شمالی افغانستان میں حزب اسلامی وحدت پارٹی کا سربراہ مقرر کر دیا گیا۔ ہزارہ نسل سے تعلق رکھنے والے محقق اس وقت بھی ملکی پارلیمان کے رکن ہیں۔ وہ ماضی میں ملک کے نائب صدر بھی منتخب کیے گئے تھے۔

افغانستان کے بڑے جنگی سردار

احمد شاہ مسعود

شیر پنجشیر کے نام سے مشہور احمد شاہ مسعود افغان جنگ میں انتہائی اہم رہنما تصور کیے جاتے تھے۔ انہوں نے طالبان کی پیشقدمی کو روکنے کی خاطر شمالی اتحاد نامی گروہ قائم کیا تھا۔ انہیں سن انیس سو بانوے میں افغانستان کا وزیر دفاع بنایا گیا تھا۔ انہیں نائن الیون کے حملوں سے دو دن قبل ہلاک کر دیا گیا تھا۔ تاجک نسل سے تعلق رکھنے والے مسعود کو ایک اہم افغان سیاسی رہنما سمجھا جاتا تھا۔

افغانستان کے بڑے جنگی سردار

ملا محمد عمر

افغان جنگ میں مجاہدین کے شانہ بشانہ لڑنے والے ملا عمر طالبان کے روحانی رہنما تصور کیا جاتے تھے۔ وہ سن 1996تا 2001 افغانستان کے غیر اعلانیہ سربراہ مملکت رہے۔ تب انہوں کئی اہم افغان جنگی سرداروں کو شکست سے دوچار کرتے ہوئے ’اسلامی امارات افغانستان‘ کی بنیاد رکھی تھی۔ سن دو ہزار ایک میں امریکی اتحادی فورسز کے حملے کے بعد ملا عمر روپوش ہو گئے۔ 2015 میں عام کیا گیا کہ وہ 2013 میں ہی انتقال کر گئے تھے۔

افغانستان کے بڑے جنگی سردار

گل آغا شیرزئی

مجاہدین سے تعلق رکھنے والے سابق جنگی سردار شیرزئی نے نجیب اللہ کی حکومت کا تختہ الٹنے میں اہم کردار ادا کیا تھا۔ وہ دو مرتبہ قندھار جبکہ ایک مرتبہ ننگرہار صوبے کے گورنر کے عہدے پر فائز رہے۔ طالبان نے جب سن انیس سو چورانوے میں قندھار پر قبضہ کیا تو وہ روپوش ہو گئے۔ سن دو ہزار ایک میں انہوں نے امریکی اتحادی فورسز کے تعاون سے اس صوبے پر دوبارہ قبضہ کر لیا۔

افغانستان کے بڑے جنگی سردار

عبدالرب رسول سیاف

سیاف ایک مذہبی رہنما تھے، جنہوں نے افغان جنگ میں مجاہدین کا ساتھ دیا۔ اس لڑائی میں وہ اسامہ بن لادن کے قریبی ساتھیوں میں شامل ہو گئے تھے۔ کہا جاتا ہے کہ سیاف نے پہلی مرتبہ بن لادن کو افغانستان آنے کی دعوت دی تھی۔ افغان جنگ کے بعد بھی سیاف نے اپنے عسکری تربیتی کیمپ قائم رکھے۔ انہی کے نام سے فلپائن میں ’ابو سیاف‘ نامی گروہ فعال ہے۔ افغان صدر حامد کرزئی نے انہیں اپنی حکومت میں شامل کر لیا تھا۔

افغانستان میں شورش اور عدم استحکام پھیلانے کے ذمہ دار تصور کیے جانے والے طالبان کے رہنما نے امریکی اور غیر ملکی افواج پر الزام عائد کیا کہ خطے میں ان کی موجودگی عدم استحکام کا باعث ہے۔ تاہم اس باغی رہنما نے کہا کہ اگر یہ افواج ’غیرقانونی قبضہ‘ ختم کرتی ہیں تو ان سے اچھے اور تعمیری تعلقات استوار ہو سکتے ہیں۔

اپنے پیغام میں آخر میں جنگجو کمانڈر ہیبب اللہ اخوندزادہ نے اپنے جنگجوؤں پر زور دیا کہ وہ اپنی کارروئیوں میں شہری ہلاکتوں کا باعث مت بنیں۔ جمعرات کے دن ہی طالبان باغیوں نے ہلمند صوبے کے ایک بینک پر خود کش حملہ کیا تھا، جس کے باعث 36 افراد ہلاک جبکہ ساٹھ سے زائد زخمی ہو گئے تھے۔ ان ہلاک شدگان میں درجنوں شہری بھی شامل تھے۔

ہمیں فالو کیجیے