مودی کی ’عظمت کے گیت گانے والے‘ بھارتی وزراء شرمندہ ہو گئے

بھارت میں وزیر اعظم نریندر مودی کی ’عظمت کے گیت گانے والے‘ دو وزراء کو انتہائی شرمندگی کا سامنا کرنا پڑا۔ ان وزراء کے لیے سخت شرمندگی کا باعث ٹوئٹر صارفین بنے، جنہوں نے ان کے سوشل میڈیا پیغامات کا پول کھول دیا۔

بھارتی دارالحکومت نئی دہلی سے بدھ تیرہ فروری کو ملنے والی نیوز ایجنسی اے ایف پی کی رپورٹوں کے مطابق ان وزراء کی کوشش تھی کہ وہ ملکی عوام کو سوشل میڈیا پر بتائیں کہ ہندو قوم پسند جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی سے تعلق رکھنے والے وزیر اعظم مودی کی حکومت کتنے ’شاندار‘ کام کر رہی ہے۔ لیکن ان کوششوں کا نتیجہ یہ نکلا کہ، اے ایف پی کے مطابق، ان دونوں سیاست دانوں کے ’منہ شرم سے سرخ ہو گئے‘۔

تیز رفتار ٹرین تھی یا ویڈیو؟

جن دو بھارتی وزراء کو یہ شرمندگی ہوئی، ان میں سے ایک ریلوے کے وفاقی وزیر پییُوش گویال تھے۔ انہوں نے مودی کے ’میڈ ان انڈیا‘ کے سیاسی نعرے کو زیادہ مقبول بنانے کے لیے ایک ویڈیو سوشل میڈیا پر شیئر کی۔ اس ویڈیو میں بظاہر بھارت کی پہلی تیز رفتار ریل گاڑی دکھائی گئی تھی، جو بہت زیادہ رفتار کے ساتھ سفر میں تھی۔

لیکن ٹوئٹر پر بھارتی صارفین نے اسی ویڈیو کی وجہ سے ریلوے کے وزیر کو شدید تنقید کا نشانہ بنانا شروع کر دیا کیونکہ ویڈیو میں ٹرین کی رفتار کو ایڈیٹنگ کے دوران اصل سے دوگنا تیز رفتاری سے سفر کرتے ہوئے دکھایا گیا تھا۔

بھارت کے سیاسی افق کا نیا ستارہ، پریانکا گاندھی

جواہر لال نہرو

برصغیر پاک و ہند کی تحریک آزادی کے بڑے رہنماؤں میں شمار ہونے والے جواہر لال نہرو پریانکا گاندھی کے پڑدادا تھے۔ وہ آزادی کے بعد بھارت کے پہلے وزیراعظم بنے اور ستائیس مئی سن 1964 میں رحلت تک وزیراعظم رہے تھے۔ اندرا گاندھی اُن کی بیٹی تھیں، جو بعد میں وزیراعظم بنیں۔

بھارت کے سیاسی افق کا نیا ستارہ، پریانکا گاندھی

اندرا گاندھی

پریانکا گاندھی کی دادی اندرا گاندھی اپنے ملک کی تیسری وزیراعظم تھیں۔ وہ دو مختلف ادوار میں بھارت کی پندرہ برس تک وزیراعظم رہیں۔ انہیں اکتیس اکتوبر سن 1984 میں قتل کر دیا گیا تھا۔ اُن کے بیٹے راجیو گاندھی بعد میں منصبِ وزیراعظم پر بیٹھے۔ راجیو گاندھی کی بیٹی پریانکا ہیں، جن کی شکل اپنی دادی اندرا گاندھی سے ملتی ہے۔

بھارت کے سیاسی افق کا نیا ستارہ، پریانکا گاندھی

راجیو گاندھی

بھارت کے چھٹے وزیراعظم راجیو گاندھی سیاست میں نو وارد پریانکا گاندھی واڈرا کے والد تھے۔ وہ اکتیس اکتوبر سن 1984 سے دو دسمبر سن 1989 تک وزیراعظم رہے۔ اُن کو سن 1991 میں ایک جلسے کے دوران سری لنکن تامل ٹائیگرز کی خاتون خودکش بمبار نے ایک حملے میں قتل کر دیا تھا۔ اُن کے قتل کی وجہ سن 1987 میں بھارت اور سری لنکا کے درمیان ہونے والا ایک سمجھوتا تھا، جس پر تامل ٹائیگرز نے ناراضی کا اظہار کیا تھا۔

بھارت کے سیاسی افق کا نیا ستارہ، پریانکا گاندھی

سونیا گاندھی

پریانکا گاندھی واڈرا کی والدہ سونیا گاندھی بھی عملی سیاست میں رہی ہیں۔ وہ انیس برس تک انڈین کانگریس کی سربراہ رہی تھیں۔ اطالوی نژاد سونیا گاندھی بھارتی پارلیمنٹ کے ایوانِ زیریں لوک سبھا کی رکن رہتے ہوئے اپوزیشن لیڈر بھی تھیں۔

بھارت کے سیاسی افق کا نیا ستارہ، پریانکا گاندھی

راہول گاندھی

بھارتی سیاسی جماعت انڈین کانگریس کے موجودہ سربراہ راہول گاندھی ہیں، جو پریانکا گاندھی واڈرا کے بڑے بھائی ہیں۔ انہوں نے سولہ دسمبر سن 2017 سے انڈین کانگریس کی سربراہی سنبھال رکھی ہے۔ وہ چھ برس تک اسی پارٹی کے جنرل سیکریٹری بھی رہے تھے۔ راہول گاندھی بھارتی پارلیمنٹ کے ایوان لوک سبھا کے رکن بھی ہیں۔

بھارت کے سیاسی افق کا نیا ستارہ، پریانکا گاندھی

پریانکا گاندھی واڈرا

راجیو گاندھی کی بیٹی پریانکا بارہ جنوری سن 1972 کو پیدا ہوئی تھیں۔ وہ شادی شدہ ہیں اور دو بچوں کی ماں بھی ہیں۔ انہوں نے سینتالیس برس کی عمر میں عملی سیاست میں حصہ لینے کا اعلان کیا ہے۔ وہ بھارتی سیاسی جماعت کانگریس کی عملی سیاست کا فروری سن 2019 میں حصہ بن جائیں گی۔

بھارت کے سیاسی افق کا نیا ستارہ، پریانکا گاندھی

سیاسی مہمات میں شمولیت

مختلف پارلیمانی انتخابات میں پریانکا گاندھی واڈرا نے رائے بریلی اور امیتھی کے حلقوں میں اپنے بھائی اور والد کی انتخابی مہمات میں باضابطہ شرکت کی۔ عام لوگوں نے دادی کی مشابہت کی بنیاد پر اُن کی خاص پذیرائی کی۔ گزشتہ کئی برسوں سے توقع کی جا رہی تھی کہ وہ عملی سیاست میں حصہ لینے کا اعلان کر سکتی ہیں اور بالآخر انہوں نے ایسا کر دیا۔

بھارت کے سیاسی افق کا نیا ستارہ، پریانکا گاندھی

عملی سیاست

پریانکا گاندھی واڈرا نے بدھ تیئس جنوری کو انڈین کانگریس کے پلیٹ فارم سے عملی سیاست میں حصہ لینے کا اعلان کیا۔ کانگریس پ‍ارٹی کی جانب سے برسوں انہیں عملی سیاست میں حصہ لینے کی مسلسل پیشکش کی جاتی رہی۔ امید کی جا رہی ہے کہ وہ مئی سن 2019 کے انتخابات میں حصہ لے سکتی ہیں۔

بھارت کے سیاسی افق کا نیا ستارہ، پریانکا گاندھی

کانگریس پارٹی کی جنرل سیکریٹری

انڈین نیشنل کانگریس پارٹی کی پریس ریلیز کے مطابق پریانکا گاندھی کو پارٹی کی دو نئی جنرل سیکریٹریز میں سے ایک مقرر کیا گیا ہے۔ اس پوزیشن پر انہیں مقرر کرنے کا فیصلہ پارٹی کے سربراہ اور اُن کے بھائی راہول گاندھی نے کیا۔ وہ اپنا یہ منصب اگلے چند روز میں سبھال لیں گی۔

بھارت کے سیاسی افق کا نیا ستارہ، پریانکا گاندھی

بی جے پی کی تنقید

بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کی ہندو قوم پرست سیاسی جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی نے پریانکا گاندھی کو کانگریس پارٹی کی جنرل سیکریٹری مقرر کرنے پر تنقید کرتے ہوئے اسے خاندانی سیاست کا تسلسل قرار دیا۔

اس بارے میں ایک بھارتی صارف نے ٹوئٹر پر لکھا، ’’وزیر ریلوے کا بہت شکریہ! انہوں نے ویڈیو کو دوگنا رفتار سے چلا کر ٹرین کو سیمی ہائی اسپیڈ بنا دیا ہے۔ لیکن اگر وہ ایڈیٹنگ میں ویڈیو کو چھ گنا زیادہ رفتار سے چلاتے ہوئے ریکارڈ کر لیتے، تو یہی بھارتی ٹرین ایک انتہائی تیز رفتار ریل گاڑی بن جاتی۔‘‘

 آخری رپورٹیں ملنے تک وزیر ریلوے نے خود اس پوسٹ پر کوئی کومنٹ نہیں کیا تھا لیکن یہ ویڈیو تب تک بھی سوشل میڈیا پر ان کی ٹائم لائن پر موجود تھی۔

ٹویٹس بھی الٹی پڑ گئیں

دوسرے بھارتی وزیر جن کو نریندر مودی کی حمایت کرتے ہوئے شرمندگی کا سامنا کرنا پڑا، خزانے اور جہاز رانی کے جونیئر وزیر پون رادھا کرشن تھے۔ وہ ٹوئٹر پر اپنے پیغامات میں مودی حکومت کی بہت تعریف کرنا چاہتے تھے۔ لیکن غلطی سے انہوں نے ایسی کئی ٹویٹس میں تعریف کے بجائے مودی حکومت پر تنقید کر ڈالی۔

جنوبی ایشیائی ممالک میں میڈیا کی صورت حال

بھوٹان

جنوبی ایشیائی ممالک میں میڈیا کو سب سے زیادہ آزادی بھوٹان میں حاصل ہے اور اس برس کے پریس فریڈم انڈکس میں بھوٹان 94 ویں نمبر پر رہا ہے۔ گزشتہ برس کے انڈکس میں بھوٹان 84 ویں نمبر پر تھا۔

جنوبی ایشیائی ممالک میں میڈیا کی صورت حال

نیپال

ایک سو اسّی ممالک کی فہرست میں نیپال عالمی سطح پر 106ویں جب کہ جنوبی ایشیا میں دوسرے نمبر پر رہا۔ نیپال بھی تاہم گزشتہ برس کے مقابلے میں چھ درجے نیچے چلا گیا۔ گزشتہ برس نیپال ایک سوویں نمبر پر تھا۔

جنوبی ایشیائی ممالک میں میڈیا کی صورت حال

افغانستان

اس واچ ڈاگ نے افغانستان میں صحافیوں کے خلاف تشدد کے واقعات میں اضافے پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔ تاہم اس برس کی درجہ بندی میں افغانستان نے گزشتہ برس کے مقابلے میں دو درجے ترقی کی ہے اور اب عالمی سطح پر یہ ملک 118ویں نمبر پر آ گیا ہے۔ جنوبی ایشیائی ممالک میں افغانستان تیسرے نمبر پر ہے۔

جنوبی ایشیائی ممالک میں میڈیا کی صورت حال

مالدیپ

اس برس کے انڈکس کے مطابق مالدیپ جنوبی ایشیا میں چوتھے جب کہ عالمی سطح پر 120ویں نمبر پر ہے۔ مالدیپ گزشتہ برس 117ویں نمبر پر رہا تھا۔

جنوبی ایشیائی ممالک میں میڈیا کی صورت حال

سری لنکا

جنوبی ایشیا میں گزشتہ برس کے مقابلے میں سری لنکا میں میڈیا کی آزادی کی صورت حال میں نمایاں بہتری دیکھی گئی ہے۔ سری لنکا دس درجے بہتری کے بعد اس برس عالمی سطح پر 131ویں نمبر پر رہا۔

جنوبی ایشیائی ممالک میں میڈیا کی صورت حال

بھارت

بھارت میں صحافیوں کے خلاف تشدد کے واقعات میں اضافہ ہوا، جس پر رپورٹرز وِدآؤٹ بارڈرز نے تشویش کا اظہار کیا۔ عالمی درجہ بندی میں بھارت اس برس دو درجے تنزلی کے بعد اب 138ویں نمبر پر ہے۔

جنوبی ایشیائی ممالک میں میڈیا کی صورت حال

پاکستان

پاکستان گزشتہ برس کی طرح اس برس بھی عالمی سطح پر 139ویں نمبر پر رہا۔ تاہم اس میڈیا واچ ڈاگ کے مطابق پاکستانی میڈیا میں ’سیلف سنسرشپ‘ میں اضافہ نوٹ کیا گیا ہے۔

جنوبی ایشیائی ممالک میں میڈیا کی صورت حال

بنگلہ دیش

جنوبی ایشیائی ممالک میں میڈیا کو سب سے کم آزادی بنگلہ دیش میں حاصل ہے۔ گزشتہ برس کی طرح امسال بھی عالمی درجہ بندی میں بنگلہ دیش 146ویں نمبر پر رہا۔

جنوبی ایشیائی ممالک میں میڈیا کی صورت حال

عالمی صورت حال

اس انڈکس میں ناروے، سویڈن اور ہالینڈ عالمی سطح پر بالترتیب پہلے، دوسرے اور تیسرے نمبر پر رہے۔ چین 176ویں جب کہ شمالی کوریا آخری یعنی 180ویں نمبر پر رہا۔

پون رادھا کرشن نے بغیر مندرجات پڑھے، جن ٹویٹس کو Modi4NewIndia# کا ہیش ٹیگ لگا کر ری ٹویٹ کیا، ان میں سے ایک ٹویٹ میں لکھا گیا تھا، ’’متوسط طبقے کے لیے بہتر فیصلے کرنا مودی حکومت کے ایجنڈے میں کہیں بہت نیچے ہے۔‘‘ اسی طرح ایک دوسری ٹویٹ یہ تھی، ’’مودی حکومت نے ماحولیاتی منصوبوں کی منظوری کے لیے جو آن لائن ٹریکنگ سسٹم متعارف کرایا ہے، اس کی وجہ سے منظوری کا وقت 600 دنوں سے کم ہو کر 1800 دن (دراصل تین گنا زیادہ) ہو گیا ہے۔‘‘

بھارت میں بہت سے ناقدین کا الزام ہے کہ وزیر اعظم مودی کی جماعت بی جے پی سوشل میڈیا پر ایک ایسی پراپیگنڈا مہم جاری رکھے ہوئے ہے، جس کا مقصد آئندہ عام انتخابات سے قبل عوامی سطح پر اس پارٹی کی ساکھ میں بہتری لانا ہے مگر خرابی یہ ہے کہ یہ مہم مبینہ طور پر بے بنیاد اور جھوٹے دعووں کے بل پر چلائی جا رہی ہے۔

میڈیا رپورٹوں کے مطابق بھارتیہ جنتا پارٹی نے اپنے ’آن لائن  کارکنوں کی ایک فوج‘ بھی بنا رکھی ہے، جس کا کام صرف یہ ہے کہ وہ بی جے پی اور مودی کے سیاسی مخالفین پر سوشل میڈیا پر حملے کرے اور ان کی ساکھ کو نقصان پہنچائے۔

م م / ش ح / اے ایف پی

موضوعات

بھارت میں ’بڑے نوٹ‘ بند، عوام پریشان

بھارتی بینکوں کے کاؤنٹروں پر اژدھام

پرانے نوٹوں کی بندش اور تبدیلی کے لیے دستیاب قلیل وقت کے سبب مختلف بینکوں کے سامنے لوگوں کی بہت بڑی تعداد جمع دکھائی دیتی ہے۔

بھارت میں ’بڑے نوٹ‘ بند، عوام پریشان

بینکوں کے باہر لمبی قطاریں

خواتین اور بزرگ شہریوں سمیت عام لوگ لمبی لمبی قطاروں میں پرانے کرنسی نوٹ تبدیل کرانے کے لیے بینکوں کے باہر کھڑے نظر آتے ہیں۔ بعض شہری انتہائی ضروری اشیاء کی خریداری کے لیے بھی اپنے پاس پیسے نہ ہونے کی شکایات کرتے دکھائی دیتے ہیں۔

بھارت میں ’بڑے نوٹ‘ بند، عوام پریشان

ادائیگی شناخت کے بعد

حکومت کی جانب سے کہا گیا ہے کہ پانچ سو اور ہزار روپے کے کرنسی نوٹ تبدیل کروانے کے لیے ہر شخص کی شناخت کے بعد ہی اسے نئے کرنسی نوٹ دیے جائیں گے۔ حکومت اس طریقے سے کالے دھن کا خاتمہ چاہتی ہے، تاہم عام شہریوں کی پریشانی کے پیش نظر اس حکومتی اقدام پر تنقید بھی کی جا رہی ہے۔

بھارت میں ’بڑے نوٹ‘ بند، عوام پریشان

بینکوں کے باہر شب بسری

بعض بینکوں کے باہر جلد اپنی باری کے لیے لوگ رات ہی کو آن کر بسیرا کر لیتے ہیں، تاکہ اگلی صبح انہیں زیادہ انتظار نہ کرنا پڑے۔

بھارت میں ’بڑے نوٹ‘ بند، عوام پریشان

باری آتی ہی نہیں

کئی بینکوں کے باہر شہریوں کی قطاریں اتنی طویل ہیں کہ لوگ اپنی باری کے انتظار میں گھنٹوں اور بعض صورتوں میں تو پورا پورا دن کھڑے دکھائی دیتے ہیں۔

ہمیں فالو کیجیے