’نازی اور حجام‘: ایڈگر ہِلزن راتھ انتقال کر گئے

عالمی شہرت یافتہ جرمن مصنف ایڈگر ہِلزن راتھ بانوے برس کی عمر میں انتقال کر گئے ہیں۔ وہ اپنے لڑکپن میں نازی جرمن دور میں جان بچانے کے لیے فرار ہو کر رومانیہ چلے جانے پر مجبور ہو گئے تھے۔

وفاقی جرمن دارالحکومت برلن سے بدھ دو جنوری کو ملنے والی نیوز ایجنسی ایسوسی ایٹڈ پریس کی رپورٹوں کے مطابق ہِلزن راتھ علیل تھے اور ان کو انتقال سے پہلے نمونیا بھی ہو گیا تھا۔ سن 1926 میں جرمنی کے مشرقی شہر لائپزگ کے ایک یہودی گھرانے میں پیدا ہونے والے ہِلزن راتھ کی دوسری اہلیہ مارلینے نے بتایا کہ ان کا انتقال تیس دسمبر گزشتہ اتوار کے روز جرمنی کے ایک مغربی شہر میں ہوا۔

1938ء میں جب ان کی عمر صرف 12 برس تھی، وہ ہٹلر کی قیادت میں نازی کہلانے والے قوم پرست سوشلسٹوں کے دور حکومت میں اپنی جان بچانے کے لیے جرمنی سے فرار ہو کر رومانیہ چلے گئے تھے۔ بعد میں انہیں وہاں سے بھی ڈی پورٹ کر کے یوکرائن بھیج دیا گیا تھا۔

ایک مصنف کے طور پر اس جرمن یہودی ادیب نے متعدد کتابیں لکھی تھیں۔ انہیں بہت زیادہ شہرت ایک ایسے ناول کی وجہ سے ملی تھی، جو تھا تو فکشن لیکن جس میں دوسری عالمی جنگ کے دوران یہودیوں کے قتل عام یا ہولوکاسٹ کو ایک نازی مجرم کے زاویہ نگاہ سے دیکھا گیا تھا۔

کئی نقاد اس ناول کو جرمن زبان میں آج تک لکھی گئی سو بہترین کتابوں میں سے ایک قرار دیتے ہیں

ان کا پہلا ناول ’رات‘ تھا، جو 1954ء میں شائع ہوا تھا۔ یہ ناول اپنے کرداروں کو درپیش ان المناک حالات کی عکاسی کرتا ہے، جو انہیں یہودیوں کے ایک ghetto میں کسی نہ کسی طرح زندہ رہنے کی تگ و دو کے دوران پیش آتے ہیں۔

ایڈگر ہِلزن راتھ کو بین الاقوامی سطح پر بہت زیادہ شہرت ان کے 1971ء میں شائع ہونے والے اور ہولوکاسٹ کے پس منظر میں لکھے گئے ناول ’نازی اور حجام‘ کی وجہ سے ملی تھی۔ اس ناول کی دنیا بھر میں کئی ملین کاپیاں فروخت ہوئی تھیں اور یہ کتاب اپنے دور کی ’بیسٹ سیلر ادبی تخلیق‘ ثابت ہوئی تھی۔

ہِلزن راتھ کا ناول ’نازی اور حجام‘ نازی جرمنی کی شکست اور دوسری عالمی جنگ کے خاتمے کے بعد کے عرصے میں ہٹلر کے ایس ایس دستوں کے ایک ایسے سابق فوجی کی رونگٹے کھڑے کر دینے والی کہانی ہے، جو اپنے جرائم کی سزا سے بچنے لیے خود کو یہودی ظاہر کرنے لگتا ہے۔ اس ناول کو بہت سے ادبی نقاد جرمن زبان میں آج تک لکھی گئی سو بہترین کتابوں میں سے ایک قرار دیتے ہیں۔

م م / ع ا / اے پی

نوبل پرائز جیتنے والے معروف ادیب

امریکی گیت نگار بوب ڈلن

امریکی گیت نگار اور ادیب بوب ڈلن کو رواں برس کے نوبل انعام برائے ادب سے نوازا گیا ہے۔ یہ پہلا موقع ہے کہ کسی گیت نگار کو ادب کا یہ اعلیٰ ترین انعام دیا گیا ہے۔ وہ بیک وقت شاعر، اداکار اور مصنف ہونے کے علاوہ ساز نواز بھی ہیں۔ انہوں نے کئی فلموں میں اداکاری کے جوہری بھی دکھائے ہیں۔

نوبل پرائز جیتنے والے معروف ادیب

2015: سویٹلانا الیکسیوچ

نوبل انعام دینے والی کمیٹی نے بیلا روس کی مصنفہ سویٹلانا الیکسیوچ کو ادب نگاری کے ایک نئے عہد کا سرخیل قرار دیا۔ کمیٹی کے مطابق الیکسیوچ نے اپنے مضامین اور رپورٹوں کے لیے ایک نیا اسلوب متعارف کرایا اورانہوں نے مختلف انٹرویوز اور رپورٹوں کو روزمرہ کی جذباتیت سے نوازا ہے۔

نوبل پرائز جیتنے والے معروف ادیب

2014: پیٹرک موڈیانو

جنگ، محبت، روزگار اور موت جیسے موضوعات کو فرانسیسی ادیب پیٹرک موڈیانو نے اپنے تحریروں میں سمویا ہے۔ نوبل کمیٹی کے مطابق انہوں نے اپنے ناآسودہ بچین کی جنگ سے عبارت یادوں کی تسلی و تشفی کے لیے ایسے موضوعات کا انتخاب کیا اور یادوں کو الفاظ کا روپ دینے کا یہ منفرد انداز ہے۔

نوبل پرائز جیتنے والے معروف ادیب

2013: ایلس مُنرو

تین برس قبل کینیڈا کی ادیبہ ایلس مُنرو کو ادب کے نوبل انعام سے نوازا گیا تھا۔ نوبل انعام دینے والی کمیٹی نے اُن کو عصری ادب کی ممتاز ترین ادیبہ قرار دیا۔ مُنرو سے قبل کے ادیبوں نے ادب کی معروف اصناف کو اپنی تحریروں کے لیے استعمال کیا تھا لیکن وہ منفرد ہیں۔

نوبل پرائز جیتنے والے معروف ادیب

2012: مو یان

چینی ادیب گوان موئے کا قلمی نام مو یان ہے۔ انہیں چینی زبان کا کافکا بھی قرار دیا جاتا ہے۔ نوبل انعام دینے والی کمیٹی کے مطابق مو یان نے اپنی تحریروں میں حقیقت کے قریب تر فریبِ خیال کو رومان پرور داستان کے انداز میں بیان کیا ہے۔ چینی ادیب کی کمیونسٹ حکومت سے قربت کی وجہ سے چینی آرٹسٹ ائی وی وی نے اِس فیصلے پر تنقید کی تھی۔

نوبل پرائز جیتنے والے معروف ادیب

2011: ٹوماس ٹرانسٹرُومر

سویڈش شاعر ٹرانسٹرُومر کے لیے ادب کے نوبل انعام کا اعلان کرتے ہوئے کہا گیا کہ اُن کی شاعری کے مطالعے کے دوران الفاظ میں مخفی جگمگاتے مناظر بتدریج حقیقت نگاری کا عکس بن جاتے ہیں۔ ٹوماس گوسٹا ٹرانسٹرُومر کی شاعری ساٹھ سے زائد زبانوں میں ترجمہ کی جا چکی ہے۔

نوبل پرائز جیتنے والے معروف ادیب

2010: ماریو ورگاس یوسا

پیرو سے تعلق رکھنے والے ہسپانوی زبان کے ادیب ماریو ورگاس یوسا کو اقتدار کے ڈھانچے کی پرزور منظر کشی اور انفرادی سطح پر مزاحمت، بغاوت و شکست سے دوچار ہونے والے افراد کی شاندار کردار نگاری پر ادب کے نوبل انعام سے نوازا گیا تھا۔ انہوں نے لاطینی امریکا کے کئی حقیقی واقعات کو اپنے ناولوں میں سمویا ہے۔ میکسیکو کی آمریت پر مبنی اُن کی تخلیق کو بہت زیادہ پذیرائی حاصل ہوئی تھی۔

نوبل پرائز جیتنے والے معروف ادیب

2009: ہیرتا مؤلر

نوبل انعام دینے والی کمیٹی کے مطابق ہیرتا مؤلر نے اپنی شاعری اور نثری فن پاروں میں بے گھر افراد کی جو کیفیت بیان کی ہے وہ ایسے افراد کے درد کا اظہار ہے۔ جیوری کے مطابق جرمن زبان میں لکھنے والی مصنفہ نے رومانیہ کے ڈکٹیٹر چاؤشیسکو کو زوردار انداز میں ہدفِ تنقید بنایا تھا۔ اُن کا ایک ناول Atemschaukel کا پچاس سے زائد زبانوں میں ترجمہ کیا جا چکا ہے۔

نوبل پرائز جیتنے والے معروف ادیب

2008: ژان ماری گستاو لاکلیزیو

فرانسیسی نژاد ماریشسی مصنف اور پروفیسر لا کلیزیو چالیس سے زائد کتب کے خالق ہے۔ ان کی تخلیقات کے بارے میں انعام دینے والی کمیٹی نے بیان کیا کہ وہ اپنی تحریروں کو جذباتی انبساط اور شاعرانہ مہم جوئی سے سجانے کے ماہر ہیں۔ بحر ہند میں واقع جزیرے ماریشس کو وہ اپنا چھوٹا سا وطن قرار دیتے ہیں۔ اُن کی والدہ ماریشس اور والد فرانس سے تعلق رکھتے ہیں۔

نوبل پرائز جیتنے والے معروف ادیب

2007: ڈورس لیسنگ

چورانوے برس کی عمر میں رحلت پا جانے والی برطانوی ادیبہ ڈورس لیسنگ نے بے شمار ناول، افسانے اور کہانیاں لکھی ہیں۔ سویڈش اکیڈمی کے مطابق خاتون کہانی کار کے انداز میں جذباتیت اور تخیلاتی قوت کوٹ کوٹ کر بھری ہوئی تھی۔ ان کا شمار نسلی تعصب رکھنے والی جنوبی افریقی حکومت کے شدید مخالفین میں ہوتا تھا۔

نوبل پرائز جیتنے والے معروف ادیب

2006: اورہان پاموک

اورہان پاموک جدید ترکی کے صفِ اول کے مصنفین میں شمار ہوتے ہیں۔ اُن کے لکھے ہوئے ناول تریسٹھ زبانوں میں ترجمہ ہونے کے بعد لاکھوں کی تعداد میں فروخت ہو چکے ہیں۔ نوبل انعام دینے والی کمیٹی کے مطابق وہ اپنے آبائی شہر (استنبول) کی اداس روح کی تلاش میں سرگرداں ہیں جو انتشار کی کیفیت میں کثیر الثقافتی بوجھ برادشت کیے ہوئے ہے۔ دنیا بھر میں وہ ترکی کے سب سے زیادہ پڑھے جانے والے ادیب تصور کیے جاتے ہیں۔

نوبل پرائز جیتنے والے معروف ادیب

2005: ہیرالڈ پِنٹر

برطانوی ڈرامہ نگار ہیرالڈ پِنٹر نوبل انعام ملنے کے تین برسوں بعد پھیھڑے کے کینسر کی وجہ سے فوت ہوئے۔ نوبل انعام دینے والی کمیٹی کے مطابق وہ ایک صاحب طرز ڈرامہ نگار تھے۔ ان کے کردار جدید عہد میں پائے جانے والے جبر کا استعارہ تھے اور وہ بطور مصنف اپنے اُن کرداروں کو ماحول کے جبر سے نجات دلانے کی کوشش میں مصروف رہے۔ وہ بیک وقت اداکار، مصنف اور شاعر بھی تھے۔

نوبل پرائز جیتنے والے معروف ادیب

2004: الفریڈے ژیلینک

آسٹرین ناول نگار الفریڈے ژیلینک کو نوبل انعام دینے کی وجہ اُن کے ناولوں اور ڈراموں میں پائی جانے والی فطری نغمگی ہے جو روایت سے ہٹ کر ہے۔ ژیلینک کے نثرپاروں میں خواتین کی جنسی رویے کی اٹھان خاص طور پر غیرمعمولی ہے۔ اُن کے ناول ’کلاویئر اشپیلرن‘ یا پیانو بجانے والی عورت کو انتہائی اہم تصور کیا جاتا ہے۔ اس نوبل پر فلم بھی بنائی جا چکی ہے۔

نوبل پرائز جیتنے والے معروف ادیب

2003: جان میکسویل کُوٹزی

جنوبی افریقہ سے تعلق رکھنے والے ناول نگار، انشا پرداز اور ماہرِ لسانیات جان میکسویل کُوٹزی کے نثرپاروں میں انتہائی وسیع منظر نگاری اور خیال افرینی ہے۔ کوئٹزے نوبل انعام حاصل کرنے سے قبل دو مرتبہ معتبر مان بکرز پرائز سے بھی نوازے جا چکے تھے۔ ان کا مشہر ناول ’شیم‘ نسلی تعصب کی پالیسی کے بعد کے حالات و واقعات پر مبنی ہے۔

نوبل پرائز جیتنے والے معروف ادیب

2002: اِمرے کارتیس

ہنگری کے یہودی النسل ادیب اصمرے کارتیس نازی دور کے اذیتی مرکز آؤشوٍٹس سے زندہ بچ جانے والوں میں سے ایک تھے۔ انہوں نے اپنی تحریروں میں اِس اذیتی مرکز پر منڈھلاتی موت کے سائے میں زندگی کے انتہائی کمزور لمحوں میں جو تجربہ حاصل کیا تھا، اسے عام پڑھنے والے کے لیے پیش کیا ہے۔ ان کا اس تناظر میں تحریری کام تیرہ برسوں پر محیط ہے۔

نوبل پرائز جیتنے والے معروف ادیب

2001: شری ودیا دھر سورج پرشاد نائپال

کیریبیئن ملک ٹرینیڈاڈ اور ٹوباگو سے تعلق رکھنے والے شری ودیا دھر سورج پرشاد نائپال ایک صاحب طرز ادیب ہیں۔ انہوں نے مشکل مضامین کو بیان کرنے میں جس حساسیت کا مظاہرہ کیا ہے، وہ اُن کا خاصا ہے۔ اُن کے موضوعات میں سماج کے اندر دم توڑتی انفرادی آزادی کو خاص اہمیت حاصل ہے۔

موضوعات