یورپی یونین کے پاسپورٹوں کا کاروبار ’ایک خطرناک پیش رفت‘

یورپی یونین کے رکن ممالک میں سے چند ایک میں نقد رقوم کے بدلے قانونی طور پر مقامی شہریت خریدی جا سکتی ہے۔ لیکن یہ ایک ایسی ’خطرناک پیش رفت‘ ہے، جو متعلقہ ممالک میں عوامیت پسند سیاستدانوں کی مضبوطی کا سبب بن رہی ہے۔

یہ رجحان بالواسطہ طور پر رنگ، نسل اور مذہب کی بنیاد پر تعصب اور اجانب بیزاری کی اس سوچ کے لیے تقویت کا باعث بھی بن رہا ہے، جس کے تحت کسی بھی معاشرے میں اکثریت کی طرف سے اقلیتوں کو سماج کے مرکزی دھارے سے دور رکھنے کی کوشش کی جاتی ہے۔

بلغاریہ سے تعلق رکھنے والے ثقافتی عمرانیات کے پروفیسر ایوائلو ڈِٹشیف

اس بارے میں بلغاریہ سے تعلق رکھنے والے ثقافتی عمرانیات کے پروفیسر ایوائلو ڈِٹشیف نے ڈوئچے ویلے کے لیے اپنی ایک خصوصی تحریر میں لکھا ہے کہ یورپی یونین قدیم سلطنت روما کی اس مثال پر عمل پیرا ہے، جس کے تحت اجنبیوں کو مقامی شہریت دی جاتی تھی تاکہ ہمسایہ اقوام کو متاثر کیا جا سکے۔ اس کا ایک ثبوت یہ بھی ہے کہ یورپی یونین کی طرف سے اس بلاک میں توسیع کے وعدوں کے باعث گزشتہ کئی برسوں سے یونین کی ہمسایہ ریاستوں میں امن و استحکام دیکھنے میں آئے ہیں۔

ماسڑشٹ کے معاہدے کے تحت یورپی یونین کے شہریوں کے لیے ’یورپی شہریت‘ کا نظریہ ایک اچھا نظریہ تھا لیکن اس بلاک کو دھچکا اس کی مشرق کی طرف توسیع کے اس عمل کے دوران لگا جب 2007ء میں رومانیہ اور بلغاریہ جیسے ممالک کو بھی یونین کی رکنیت دے دی گئی۔ اسے قبل یہ بھی ہوا تھا کہ سابق سوویت یونین کی تقسیم کے بعد جرمنی اور یونان نے سابق سوویت یونین کے ایسے لاکھوں شہریوں کو بھی اپنی اپنی شہریت دے دی، جن کے اجداد کا تعلق ان ممالک سے تھا۔


شہریت کے لیے قوم پسندانہ سوچ

یورپی یونین کے رکن ممالک میں سے پہلے ہنگری اور پھر بلغاریہ نے بھی اپنے ہاں قومیت کی شناخت کے معاملے کو قوم پسندانہ طور پر استعمال کیا۔ 1993ء سے ہنگری کے ہمسایہ ممالک میں مقیم ہنگیرین اقلیتوں کو نسلی اور قومی  بنیادوں پر ہنگری کی شہریت دیا جانا بھی ایک سیاسی چال ثابت ہوا اور اس دوران اس ملک میں بائیں بازو کے لبرل سیاستدانوں کی طرف سے کی گئی تنقید کو قطعی نظر انداز کر دیا گیا۔

Infografik Golden Visa Program EN

امیر سے امیر تر بننے کا ذریعہ، خریدا ہوا سفارتی پاسپورٹ

جرمنی میں دوہری شہریت لینے والوں میں اضافہ

جیسا کہ بلقان کے خطے میں عام ہے، بلغاریہ میں بھی اکثر لوگوں کے پاس ایسی دستاویزات نہیں ہوتیں، جن کی مدد سے وہ قومی یا نسلی طور پر اپنے بلغا‌رین ہونے کو ثابت کر سکیں۔ بلغاریہ کی بیرون ملک آباد اقلیتیوں کے پاس محض ’بلغارین شعور‘ ہی ہوتا ہے۔ لیکن اس لحاظ سے تو شمالی مقدونیہ کا ہر شہری یہ دعویٰ کر سکتا ہے کہ وہ بلغارین نسل یا قومیت سے تعلق رکھتا ہے۔

بلغاریہ کے قوم پرست تو ویسے بھی یہ کہتے ہیں کہ مقدونیہ کے عوام بلغاریہ ہی کا حصہ ہیں۔ ایسے میں جب ایسے غیر ملکیوں کو بلغاریہ کا پاسپورٹ ملتا ہے، تو وہ پہلے بلغاریہ اور پھر یورپی یونین میں مزید مغرب کی طرف جانا شروع کر دیتے ہیں۔ اس کا مطلب ہے پورے شینگن زون میں بغیر ویزے کے آزادانہ آمد و رفت اور کام کرنے کے مواقع۔

کپاس سے کرنسی نوٹ تک: یورو کیسے بنایا جاتا ہے؟

ملائم کپاس سے ’ہارڈ کیش‘ تک

یورو کے بینک نوٹ کی تیاری میں کپاس بنیادی مواد ہوتا ہے۔ یہ روایتی کاغذ کی نسبت نوٹ کی مضبوطی میں بہتر کردار ادا کرتا ہے۔ اگر کپاس سے بنا نوٹ غلطی سے لانڈری مشین میں چلا جائے تو یہ کاغذ سے بنے نوٹ کے مقابلے میں دیر پا ثابت ہوتا ہے۔

کپاس سے کرنسی نوٹ تک: یورو کیسے بنایا جاتا ہے؟

خفیہ طریقہ کار

کپاس کی چھوٹی چھوٹی دھجیوں کو دھویا جاتا ہے، انہیں بلیچ کیا جاتا ہے اور انہیں ایک گولے کی شکل دی جاتی ہے۔ اس عمل میں جو فارمولا استعمال ہوتا ہے اسے خفیہ رکھا جاتا ہے۔ ایک مشین پھر اس گولے کو کاغذ کی لمبی پٹیوں میں تبدیل کرتی ہے۔ اس عمل تک جلد تیار ہو جانے والے نوٹوں کے سکیورٹی فیچرز، جیسا کہ واٹر مارک اور سکیورٹی تھریڈ، کو شامل کر لیا جاتا ہے۔

کپاس سے کرنسی نوٹ تک: یورو کیسے بنایا جاتا ہے؟

نوٹ نقل کرنے والوں کو مشکل میں ڈالنا

یورو بینک نوٹ تیار کرنے والے اس عمل کے دوران دس ایسے طریقے استعمال کرتے ہیں جو کہ نوٹ نقل کرنے والوں کے کام کو خاصا مشکل بنا دیتے ہیں۔ ایک طریقہ فوئل کا اطلاق ہے، جسے جرمنی میں نجی پرنرٹز گائسیکے اور ڈیفریئنٹ نوٹ پر چسپاں کرتے ہیں۔

کپاس سے کرنسی نوٹ تک: یورو کیسے بنایا جاتا ہے؟

نقلی نوٹ پھر بھی گردش میں

پرنٹنگ کے کئی پیچیدہ مراحل کے باوجود نقال ہزاروں کی تعداد میں نوٹ پھر بھی چھاپ لیتے ہیں۔ گزشتہ برس سن دو ہزار دو کے بعد سب سے زیادہ نقلی نوٹ پکڑے گئے تھے۔ یورپی سینٹرل بینک کے اندازوں کے مطابق دنیا بھر میں نو لاکھ جعلی یورو نوٹ گردش کر رہے ہیں۔

کپاس سے کرنسی نوٹ تک: یورو کیسے بنایا جاتا ہے؟

ایک فن کار (جس کا فن آپ کی جیب میں ہوتا ہے)

رائن ہولڈ گیرسٹیٹر یورو بینک نوٹوں کو ڈیزائن کرنے کے ذمے دار ہیں۔ جرمنی کی سابقہ کرنسی ڈوئچے مارک کے ڈیزائن کے دل دادہ اس فن کار کے کام سے واقف ہیں۔ نوٹ کی قدر کے حساب سے اس پر یورپی تاریخ کا ایک منظر پیش کیا جاتا ہے۔

کپاس سے کرنسی نوٹ تک: یورو کیسے بنایا جاتا ہے؟

ہر نوٹ دوسرے سے مختلف

ہر نوٹ پر ایک خاص نمبر چھاپا جاتا ہے۔ یہ نمبر عکاسی کرتا ہے کہ کن درجن بھر ’ہائی سکیورٹی‘ پرنٹرز کے ہاں اس نوٹ کو چھاپا گیا تھا۔ اس کے بعد یہ نوٹ یورو زون کے ممالک کو ایک خاص تعداد میں روانہ کیے جاتے ہیں۔

کپاس سے کرنسی نوٹ تک: یورو کیسے بنایا جاتا ہے؟

پانح سو یورو کے نوٹ کی قیمت

ایک بینک نوٹ پر سات سے سولہ سینٹ تک لاگت آتی ہے۔ چوں کہ زیادہ قدر کے نوٹ سائز میں بڑے ہوتے ہیں، اس لیے اس حساب سے ان پر لاگت زیادہ آتی ہے۔

کپاس سے کرنسی نوٹ تک: یورو کیسے بنایا جاتا ہے؟

آنے والے نئے نوٹ

سن دو ہزار تیرہ میں پانچ یورو کے نئے نوٹ سب سے زیادہ محفوظ قرار پائے تھے۔ اس کے بعد سن دو ہزار پندرہ میں دس یورو کے نئے نوٹوں کا اجراء کیا گیا۔ پچاس یورو کے نئے نوٹ اگلے برس گردش میں آ جائیں گے اور سو اور دو یورو کے نوٹ سن دو ہزار اٹھارہ تک۔ پانچ سو یورو کے نئے نوٹوں کو سن دو ہزار انیس تک مارکیٹ میں لایا جا سکتا ہے۔

بلغاریہ کے پاسپورٹوں کا گندا کاروبار

بلغاریہ میں اس بات کے تعین کا کوئی واضح ضابطہ موجود ہی نہیں کہ مقامی شہریت کی درخواست دینے والے کسی فرد کی شخصیت میں ’بلغارین شعور‘ کی تشخیص کیسے کی جائے۔ یہ فیصلہ اکثر سرکاری اہلکاروں کی ذاتی صوابدید اور اندازوں کی بنیاد پر کیا جاتا ہے۔ یہی بات ایک غیر قانونی کاروبار کے پھلنے پھولنے کی وجہ بن رہی ہے۔

جاپانی پاسپورٹ پہلے اور پاکستانی 102 ویں مقام پر

موضوعات

یعنی آپ پانچ ہزار یورو تک رقم ادا کر کے بلغاریہ کا پاسپورٹ خرید سکتے ہیں۔ یہ حقائق 2018ء میں منظر عام پر آئے اور اس مجرمانہ کارروائی میں بلغاریہ کے قوم پسندوں کی جماعت کے ارکان بھی ملوث پائے گئے تھے۔ ساتھ ہی انہی ’پاسپورٹوں کی تقسیم اور فروخت‘ کو اقتصادی سرمایہ کاری کے ذرائع کے طور پر بھی استعمال کیا جا رہا ہے۔

گولڈن ویزا

یورپی یونین کے رکن ممالک میں سے جن ریاستوں میں گولڈن ویزے کی بات کی جاتی ہے، وہاں یہی بات سرمایہ کاری سے بھی جڑی ہوئی ہے۔ اس سلسلے میں یورپی کمیشن کی طرف سے بلغاریہ کے علاوہ قبرص اور مالٹا پر بھی کھل کر تنقید کی جا چکی ہے۔ اس طرح کوئی بھی غیر ملکی، جو کہ کوئی مطلوب مجرم بھی ہو سکتا ہے، ایک بڑی رقم ادا کر کے یا سرمایہ کاری کی ضمانت دے کر ان ممالک کی شہریت یا وہاں مستقل رہائش کا اجازت نامہ حاصل کر سکتا ہے۔

بائی بائی برطانیہ، ہم جا ر ہے ہیں

ووڈافون

موبائل فون سروسز فراہم کرنے والے دنیا کے اس دوسرے بڑے ادارے کی جانب سے کہا جا رہا ہے کہ برطانیہ کو الوداع کہہ دینا خارج از امکان نہیں ہے اور ممکنہ طور پر یہ ادارہ اپنے ہیڈکوارٹرز جرمن شہر ڈسلڈورف میں منتقل کر دے گا۔ جرمن علاقے رائن لینڈ میں ووڈافون کے نئے کیمپس میں پانچ ہزار ملازمین کی گنجائش ہے۔ پھر یہ بھی ہے کہ جرمنی اس ادارے کی سب سے بڑی منڈی بھی ہے۔

بائی بائی برطانیہ، ہم جا ر ہے ہیں

راین ایئر

پروازوں کی سہولت فراہم کرنے والے اس سب سے بڑے یورپی ادارے کا مرکزی دفتر ویسے تو آئر لینڈ میں ہے لیکن اب تک اس کے زیادہ تر طیارے برطانوی سرزمین پر ہی موجود رہے ہیں تاہم اب یہ صورتِ حال بدلنے والی ہے۔ راین ایئر نے اعلان کیا ہے کہ برطانیہ میں کوئی نیا طیارہ نہیں رکھا جائے گا اور نہ ہی برطانوی ایئر پورٹس سے راین ایئر کے کوئی نئے رُوٹ متعارف کرائے جائیں گے۔

بائی بائی برطانیہ، ہم جا ر ہے ہیں

ایزی جیٹ

سستی پروازوں کی سہولت فراہم کرنے والی اس دوسری بڑی یورپی کمپنی کا شمار اُن کاروباری اداروں میں ہوتا ہے، جو یورپ میں آج کل سب سے زیادہ منافع میں جا رہے ہیں۔ سرِد ست اس ادارے کا مرکزی دفتر لندن میں ہے لیکن کب تک؟ رواں ہفتے اس ادارے کی مجلس عاملہ کی خاتون سربراہ کیرولین میکال نے بڑے ٹھنڈے انداز میں کہا، ’دیکھیں کیا ہوتا ہے؟‘

بائی بائی برطانیہ، ہم جا ر ہے ہیں

ورجن

رچرڈ برینسن برطانیہ کے مشہور ترین آجرین میں سے ایک ہیں۔ بریگزٹ ریفرنڈم کے نتائج پر اُن کا تبصرہ تھا: ’’ہم ایک تباہی کی جانب بڑھ رہے ہیں۔‘‘ تئیس جون کے ریفرنڈم کے بعد بازار حصص میں اُن کی کمپنی ورجن کے شیئرز کی قیمتوں میں ایک تہائی کمی ریکارڈ کی گئی ہے۔ برینسن کا مطالبہ ہے کہ یہی ریفرنڈم ایک بار پھر منعقد کرایا جائے۔

بائی بائی برطانیہ، ہم جا ر ہے ہیں

جے پی مارگن

اس سب سے بڑے امریکی بینک کی لندن شاخ میں سولہ ہزار ملازمین کام کرتے ہیں۔ اب یہ بینک اپنے کاروبار کے ایک حصے کو برطانیہ سے کہیں اور منتقل کرنے کے بارے میں سوچ رہا ہے۔ اس بینک کے سربراہ جیمی ڈائمن نے ریفرنڈم سے پہلے ہی کہہ دیا تھا کہ ایک سے لے کر چار ہزار تک آسامیاں کہیں اور منتقل کی جا سکتی ہیں۔

بائی بائی برطانیہ، ہم جا ر ہے ہیں

ویزا

کریڈٹ کارڈ کی سہولت فراہم کرنے والے اس ادارے کے پاس برطانیہ میں اپنی سینکڑوں ملازمتیں ختم کرنے کے سوا غالباً کوئی چارہ ہی نہیں ہے۔ یورپی یونین کی شرائط میں سے ایک یہ بھی ہے کہ ایسے کسی ادارے کا ڈیٹا یورپی یونین کے کسی رکن ملک کے اندر پڑا ہونا چاہیے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ لندن میں اس ادارے کے ڈیٹا سینٹر کو بند کرنا پڑے گا۔

بائی بائی برطانیہ، ہم جا ر ہے ہیں

فورڈ

اس امریکی کار ساز ادارے کے لیے برطانیہ یورپ میں ایک ’کلیدی منڈی‘ کی حیثیت رکھتا ہے اور ادارے نے اس بات کا بار بار اظہار بھی کیا ہے۔ ڈیگنہیم میں واقع فورڈ کا کارخانہ جرمن پیداواری مراکز کو انجن اور دیگر پُرزہ جات بھی فراہم کرتا ہے۔ بریگزٹ ریفرنڈم کے بعد اس ادارے کی جانب سے کہا گیا کہ یہ ادارہ ایسے تمام ضروری اقدامات کرے گا، جن سے اس کی مقابلہ بازی کی صلاحیت کو برقرار رکھا جا سکتا ہو۔

بائی بائی برطانیہ، ہم جا ر ہے ہیں

جیگوار لینڈ رووَر

لیکن ایسا نہیں ہے کہ سبھی ادارے ہی مایوس ہیں۔ جیگوار لینڈ رووَر کے اسٹریٹیجی کے شعبے کے سربراہ ایڈریان ہال مارک نے کہا، ’’ہم برطانوی ہیں اور برطانیہ کا ساتھ دیں گے۔‘‘ ہال مارک نے یقین دلایا کہ کاروبار معمول کے مطابق جاری ہے۔ شاید وہ بھی یہ بات جانتے ہیں کہ کم از کم اگلے دو سال تک برطانیہ بدستور یورپی یونین کا ہر لحاظ سے مکمل رکن رہے گا۔

اسی تناظر میں یورپی یونین کی انصاف سے متعلقہ امور کی نگران خاتون کمشنر ویرا ژُورووا تو کئی ایسے روسی شہریوں کی مثالیں بھی دے چکی ہیں، جو اس طرح یورپی یونین کے رکن ممالک میں رہائشی اجازت نامے حاصل کرنے میں کامیاب رہے۔

شہریت برائے فروخت

مسئلہ صرف سلامتی کا نہیں ہے۔ اس کام کے پیچھے ایک ایسی منڈی ہے، جہاں شہریت اور شہری حقوق بیچے اور خریدے جاتے ہیں۔ یہ صورت حال ایسے چھوٹے ممالک کی حکومتوں کے مابین ایک بے ہنگم مقابلے کی صورت اختیار کر چکی ہے، جو غیر ملکیوں کو اپنے ہاں کی شہریت دے کر مقامی سطح پر انہی نئے شہریوں کے ہاتھوں مقامی سرکایہ کاری کے خواہش مند ہیں۔

یہ شہریت ایک بڑی رقم ادا کر کے حاصل کی جا سکتی ہے اور حیرانی کی بات تو یہ ہے کہ اس عمل کے لیے درخواست دہندہ کا ذاتی طور پر اس متعلقہ ملک میں موجود ہونا بھی ضروری نہیں ہوتا، جس کی شہریت وہ لے رہا ہوتا ہے۔ یوں مستقبل میں کوئی بھی ایسا غیر ملکی دنیا کے کسی ایسے جزیرے سے ہی اپنے لیے یورپی یونین کی شہریت کی درخواست دے سکتا ہے، جہاں وہ اپنا کالا دھن چھپائے بیٹھا ہو یا کم ٹیکسوں کی وجہ سے مقیم ہو۔

بلیو کارڈ: پیشہ ور افراد کے لیے یورپ کا دروازہ

غیر ملکیوں کا آسان انضمام

بلیو کارڈ اسکیم کو 2012ء میں متعارف کرایا گیا تھا۔ بلیو کارڈ لینے والے کے لیے یورپی یونین کے کسی بھی ملک میں کام کرنے کے مواقع کھل جاتے ہیں۔ اس کے لیے یورپی یونین کے باہر کا کوئی بھی شخص درخواست دے سکتا ہے۔ کسی جرمن یونیورسٹی میں تعلیم حاصل کرنے کے لیے آنے والے طالب علم بھی تعلیم مکمل کرنے کے بعد 18 ماہ تک جرمنی میں رہ کر کام کی تلاش کر سکتے ہیں۔

بلیو کارڈ: پیشہ ور افراد کے لیے یورپ کا دروازہ

پورے یورپی یونین میں کہیں بھی

بلیو كارڈ کے حامل فرد کو ڈنمارک، آئر لینڈ اور برطانیہ کو چھوڑ کر یورپی یونین کے کسی بھی ملک میں کام کرنے کی اجازت مل جاتی ہے۔ شرط یہ ہے کہ اس شخص نے یورپ سے باہر کسی ملک میں کالج کی تعلیم مکمل کی ہو اور اس کے پاس جرمنی کی کسی کمپنی کی طرف سے سالانہ کم از کم 48,400 یورو تنخواہ کی ملازمت کا كنٹریکٹ موجود ہو۔ ڈاکٹرز اور انجینئرز کے لیے سالانہ 37,725 یورو تنخواہ کا کنٹریکٹ بھی قابل قبول ہے۔

بلیو کارڈ: پیشہ ور افراد کے لیے یورپ کا دروازہ

خاص شعبوں میں زیادہ امکانات

جرمنی کے کئی علاقوں میں کچھ شعبوں کے ماہرین کی کافی کمی ہے جیسے کہ مكینیكل انجینئرز، ڈاکٹرز اور نرسز وغیرہ۔ اس کے علاوہ کئی شعبوں میں ریسرچ اینڈ ڈیویلپمنٹ یعنی تحقیق و ترقی کا کام کرنے والوں کی بھی کمی ہے۔ اعداد و شمار کے مطابق 2020ء تک جرمنی میں قریب دو لاکھ چالیس ہزار انجینئرز کی ضرورت ہوگی۔ ان علاقوں میں تربیت یافتہ لوگوں کو بلیوكارڈ ملنا زیادہ آسان ہے۔

بلیو کارڈ: پیشہ ور افراد کے لیے یورپ کا دروازہ

بلیو کارڈ کے بارے میں تفصیلی معلومات

جرمن حکومت نے بلیو کارڈ کے بارے میں تفصیلی معلومات کی فراہمی کے لیے ایک ویب پورٹل بنا رکھا ہے http://www.make-it-in-germany.com ۔ یہاں آپ جرمنی سے متعلق تمام موضوعات پر معلومات مل سکتی ہیں۔

بلیو کارڈ: پیشہ ور افراد کے لیے یورپ کا دروازہ

خاندان کی رہائش بھی ساتھ

صرف 2014ء میں ہی تقریباﹰ 12,000 لوگوں کو بلیو کارڈ دیا گیا۔ بلیو کارڈ ہولڈر اپنے کنبے کو بھی جرمنی لا سکتا ہے۔ اس کے لیے اُس کے اہلِ خانہ کی جرمن زبان سے واقفیت ہونے کی شرط بھی نہیں ہوتی۔ بلیو کارڈ ہولڈرز کے پارٹنر کو بھی کام کرنے کی اجازت مل سکتی ہے ۔

بلیو کارڈ: پیشہ ور افراد کے لیے یورپ کا دروازہ

سیاسی پناہ کے متلاشی افراد کے لیے بھی بلیو کارڈ کا مطالبہ

روزگار کی وفاقی جرمن ایجنسی نے اب مطالبہ کیا ہے کہ سیاسی پناہ کے متلاشی ایسے افراد کو بھی بلیو کارڈ کی سہولت دی جائے، جو اعلیٰ تعلیمی قابلیت کے حامل ہوں اور مخصوص شعبوں میں مہارت رکھتے ہوں۔

بلیو کارڈ: پیشہ ور افراد کے لیے یورپ کا دروازہ

تشہیری مہم کی ضرورت

بعض جرمن ماہرین اس بات کے قائل ہیں کہ بلیو کارڈ کو دیگر ممالک میں متعارف کرانے کے لیے ایک جارحانہ تشہیری مہم کی بھی ضرورت ہے۔ یہ امر اہم ہے کہ جرمنی کی 1250 سے زائد کمپنیوں نے کھلے عام یہ کہہ رکھا ہے کہ وہ غیر ملکی ہنر مند افراد کو ملازمتیں فراہم کرنے کے لیے تیار ہیں۔

مسئلے کا حل کیا ہے؟

اس رجحان پر قابو پانے کے دو طریقے ہو سکتے ہیں۔ ایک تو یہ کہ یورپی یونین کے رکن ممالک میں مقامی شہریت دیے جانے کے یورپی سطح پر یکساں نطام اور شرائط متعارف کرائے جائیں، جن پر عمل درآمد اس بلاک کی رکن ہر ریاست کے لیے لازمی ہو۔ لیکن یہ سیاسی کامیابی یورپی یونین کے کئی ممالک میں قوم پرست قوتوں کی مضبوطی کے دور میں مشکل نظر آتی ہے۔

دوسرا حل یہ ہو سکتا ہے کہ یورپی یونین میں مقامی اور یورپی سطح کی شہریت کے مابین تفریق کا نظام متعارف کرا دیا جائے، یعنی پہلے مثلاﹰ کوئی غیر ملکی بلغاریہ، قبرص یا مالٹا وغیر کی مقامی شہریت حاصل کرے اور پھر دوسرے مرحلے میں دیگر شرائط پوری کرنے پر یورپی یونین کی شہریت کے دستاویزی حقوق حاصل کرے۔

اگر کوئی یہ کہے کہ ایسا کرنا تو یورپی یونین کے معاہدوں کی خلاف ورزی ہو گا، تو اس کا جواب یہ ہے کہ اگر یورپی پاسپورٹوں کا یہ کاروبار بند نہ ہوا، جو کہ سہولتوں اور مراعات کا غلط استعمال ہے، تو پھر، چاہے کسی کو پسند آئے یا نہ آئے، یورپی یونین میں پاسپورٹوں کی سطح پر بھی ایک متنوع نظام دیکھنے میں آ سکتا ہے۔

یونان میں غیر قانونی پاکستانی تارکین وطن کا المیہ

’ماں کا زیور بیچ کر آیا ہوں‘

پاکستانی صوبہ پنجاب کے ضلع گجرات سے تعلق رکھنے والے ایک نوجوان تارک وطن کے مطابق وہ اپنی والدہ کا زیور بیچ کر اور اپنی جان خطرے میں ڈال کر یونان تک پہنچا ہے اور کسی صورت واپس نہیں جائے گا۔

یونان میں غیر قانونی پاکستانی تارکین وطن کا المیہ

یونان بھی پناہ نہیں دے رہا

یورپی یونین اور ترکی کے مابین طے پانے والے معاہدے کے مطابق جو تارکین وطن یونان میں سیاسی پناہ کی درخواستیں نہیں دے رہے، انہیں واپس ترکی بھیجا جا رہا ہے۔ پاکستانی تارکین وطن کی اکثریت نے یونان میں پناہ کی درخواست اس لیے بھی نہیں دیں کہ انہیں خدشہ ہے کہ وہ مسترد کر دی جائیں گی۔

یونان میں غیر قانونی پاکستانی تارکین وطن کا المیہ

’یورپی یونین ترکی کو پیسے نہ دے‘

لیسبوس میں موجود یورپ میں پناہ کے خواہش مند ان پاکستانیوں کا دعویٰ ہے کہ ترکی یورپ سے پیسے لے کر مہاجرین کو واپس ترکی آنے کی اجازت دے رہا ہے۔ انہیں نے الزام عائد کیا کہ ترکی اپنے ہاں پناہ گزینوں کو کوئی سہولیات نہیں دیتا اور وہاں انہیں پہلے بھی کھلے آسمان تلے سونا پڑتا تھا۔

یونان میں غیر قانونی پاکستانی تارکین وطن کا المیہ

صرف شامی مہاجرین ہی پناہ کے مستحق؟

یورپ میں زیادہ تر صرف خانہ جنگی سے بچ کر آنے والے شامی مہاجرین ہی کو پناہ دی جا رہی ہے۔ پاکستان اور افغانستان سے تعلق رکھنے والے تارکین وطن کا کہنا ہے کہ وہ بھی اپنی جانوں کے تحفظ کے لیے یورپ میں پناہ حاصل کرنا چاہتے ہیں۔

یونان میں غیر قانونی پاکستانی تارکین وطن کا المیہ

خیمے عارضی، سفر مسلسل

لیسبوس کے جزیرے پر سمندر کے کنارے عارضی خیموں میں شب و روز گزارنے والے ان پاکستانی تارکین وطن کا سفر ابھی ختم نہیں ہوا۔ یورپ اور ترکی کے مابین معاہدے کے بعد انہیں بھی واپس ترکی جانا پڑے گا لیکن انہیں پھر بھی امید ہے کہ وہ مغربی یورپ کی جانب اپنا سفر جاری رکھ سکیں گے۔

یونان میں غیر قانونی پاکستانی تارکین وطن کا المیہ

بحیرہ ایجیئن کا خطرناک سفر بےسود

خستہ حال کشتیوں کے ذریعے بحیرہ ایجیئن عبور کر کے ترکی سے بحفاظت یونان پہنچ جانے والے یہ تارکین وطن دراصل خوش قسمت ہیں۔ یورپ میں مہاجرین کے موجودہ بحران کے دوران اب تک ہزاروں انسان سمندر میں ڈوب چکے ہیں۔

یونان میں غیر قانونی پاکستانی تارکین وطن کا المیہ

کھانے کے لیے قطار

لیسبوس نامی اس یونانی جزیرے پر موجود ان تارکین وطن کو کافی کھانا بھی دستیاب نہیں ہوتا۔ کھانے کے حصول کے لیے انہیں طویل قطاروں میں کھڑے ہو کر اپنی باری کا انتظار کرنا پڑتا ہے۔

یونان میں غیر قانونی پاکستانی تارکین وطن کا المیہ

’خواب ایسا تو نہیں تھا‘

اچھے مستقبل کی خواہش دل میں لیے اور خطرناک راستے عبور کر کے یونان پہنچنے والے ان پاکستانی تارکین وطن کو اپنے شب و روز ایسی خستہ حالی میں گزارنا پڑ رہے ہیں کہ وہ ان حالات کو اپنے مستقبل کے خوابوں اور ان کی ممکنہ تعبیر کے بالکل برعکس قرار دیتے ہیں۔

یونان میں غیر قانونی پاکستانی تارکین وطن کا المیہ

’ہمیں بھی پناہ دو!‘

پاکستان، افغانستان اور دیگر ممالک سے تعلق رکھنے والے ان تارکین وطن کو یورپ میں پناہ ملنے کے امکانات نہایت کم ہیں۔ پناہ کے متلاشی ان غیر ملکیوں کا احتجاج کرتے ہوئے کہنا تھا کہ یورپی یونین انہیں بھی شامی مہاجرین کی طرح انسانی ہمدردی کی بنیاد پر پناہ دے۔

یونان میں غیر قانونی پاکستانی تارکین وطن کا المیہ

’مر جائیں گے، واپس نہیں جائیں گے‘

ترکی سے یونان پہنچنے والے اور اب وہاں سے ملک بدری کے تقریباﹰ یقینی خطرے کا سامنا کرنے والے ان تارکین وطن کا کہنا ہے کہ وہ ترکی واپسی کے بجائے موت کو ترجیح دیں گے۔ اس موقف کے ساتھ اب وہ احتجاجی مظاہرے بھی کرنے لگے ہیں۔

یونان میں غیر قانونی پاکستانی تارکین وطن کا المیہ

جب پریشانی بےحال کردے

ان تارکین وطن کو ان کے احتجاج کے باوجود ابھی تک یہی ’ناپسندیدہ امکان‘ دکھائی دے رہا ہے کہ انہیں زبردستی واپس ترکی بھیج دیا جائے گا۔ انسانی حقوق کی کئی تنظیموں کی رائے میں ترکی خود بھی کوئی ’محفوظ ملک‘ نہیں ہے۔

ایوائلو ڈِٹشیف بلغاریہ سے تعلق رکھنے والے ثقافتی عمرانیات کے ماہر ہیں، جو اس وقت جرمن شہر ریگنزبرگ کی ایک یونیورسٹی میں مہمان پروفیسر کے طور پر تدریسی شعبے سے وابستہ ہیں۔

ہمیں فالو کیجیے